وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا دبنگ بیان؟

وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ وہ اللہ تعالیٰ کے بے حد شکر گزار ہیں جس نے انہیں رو بہ صحت کیا۔ انہوں نے کہا کہ وہ میڈیا کی وساطت سے تمام کرم فرماؤں کے شکر گزار ہیں جنہوں نے ان کی صحتیابی کیلئے خیر سگالی اور دعاؤں کے پیغامات بھیجے۔ انہوں نے کہا کہ تمام ہم وطنوں سے گذارش ہو گی کہ گھبرائیں نہیں احتیاطی تدابیر اختیار کریں اور اگر علامات محسوس ہوں تو تاخیر نہ کریں فوری طور پر طبی ماہرین سے رابطہ کریں۔ مجھے جب ابتدائی طور پر علامات محسوس ہوئیں تو میں نے حفظ ما تقدم کے طور پر تمام ملاقاتیں اور اجلاس منسوخ کر دیے تاکہ میری وجہ سے کوئی اور اس مرض کا شکار نہ ہو۔ فوری طور پر ٹیسٹ ہو جانے کے باعث اور جلد علاج شروع ہو جانے کے سبب میری طبیعت بتدریج سمبھلنے لگی۔ مجھے پلازمہ بھی انجیکٹ کیا گیا۔ میں تمام ڈاکٹرز اور پیرا میڈیکل اسٹاف جو اس کرونا وبا کے خلاف برسرِ پیکار ہیں اور دن رات مریضوں کی دیکھ بھال میں مصروف ہیں ان کی عظمت کا اعتراف کرتا ہوں اور انہیں سلام پیش کرتا ہوں۔ ملٹری اسپتال راولپنڈی میں جس طرح سے ڈاکٹرز اور پیرامیڈیکل اسٹاف نے میرا خیال رکھا میں تہہ دل سے ان کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ میں الحمد للہ گھر منتقل ہو چکا ہوں۔ اور خود کو بہت بہتر محسوس کر رہا ہوں میرے دوبارہ ٹیسٹ لیے گئے ہیں جو انشاء اللہ درست ہوں گے۔

سپریم کورٹ کی طرف سے شوگر مل مالکان کے خلاف کارروائی کرنے کی اجازت کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ احتساب کے بغیر شفاف سیاسی قیادت کا سامنے آنا ناممکن ہے۔وقت آگیا ہے کہ ہم بے جا کیچڑ اچھالنا بند کر دیں اور اصلی مجرموں کو کٹہرے میں لائیں تاکہ وہ بے نقاب ہوں

اپنا تبصرہ بھیجیں