پاکستان کو نوچنے کھسوٹنے والوں کا ایک اور کارنامہ منظر عام پر ۔۔۔۔ شوکر کمیشن رپورٹ میں شریف خاندان کی ایک اور چوری بے نقاب ہو گئی

پاکستان کو نوچنے کھسوٹنے والوں کا ایک اور کارنامہ منظر عام پر ۔۔۔۔ شوکر کمیشن رپورٹ میں شریف خاندان کی ایک اور چوری بے نقاب ہو گئی

اسلام آباد (ویب ڈیسک) شوگر ملزکی جانب سے کسانوں کو رقم ادا نہ کرنے کے حوالے سے شوگر کمیشن کی رپورٹ منظر عام پر آ گئی۔شوگر کمیشن کی رپورٹ کے مطابق شریف خاندان کی دو شوگر ملز نے رواں سال خریدے گئے گنے کے کروڑوں روپے ادا نہیں کیے۔

رمضان شوگر ملز کے ذمہ کسانوں کے 46 کروڑ 34 لاکھ روپے واجب الادا ہیں جب کہ ہارون اختر خان کی ملکیتی دو شوگر ملز تاندلیانوالہ ون اور ٹو کے ذمہ 26 کروڑ روپے واجب الادا ہیں۔ العربیہ شوگر ملز نے 9 کروڑ 83 لاکھ روپے، چنار شوگر ملز 8 کروڑ 74 لاکھ روپے اور حسین شوگر ملز نے کسانوں کو 6 کروڑ 60 لاکھ روپے ادا نہیں کیے۔ حق باہو شوگر ملزکے ذمہ چار کروڑ 90 لاکھ، شکرگنج ون اور ٹو کے ذمہ کسانوں کے 19 کروڑ روپے واجب الادا ہیں۔ رپورٹ کے مطابق رواں برس پنجاب کی 41 شوگر ملز نے ایک کھرب 75 ارب 44 کروڑ روپے کا گنا خریدا۔ شوگر ملز کی طرف سے کسانوں کو ایک کھرب 74 ارب 8 کروڑ روپے کی ادائیگیاں کی گئی ہیں۔ دوسری جانب شوگر ملز ایسوسی ایشن کا کہنا ہے کہ ادائیگیاں مرحلہ وار کی جاتی ہیں، واجب الادا رقم جلد ادا کر دی جائے گی۔ اسلام آباد ہائیکورٹ نے شوگر ملز ایسوسی ایشن کی انٹرا کورٹ اپیل پر فیصلہ محفوظ کرلیا۔ناسلام آباد ہائیکورٹ کے جسٹس عامرفاروق اورجسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے شوگرملز مالکان کی اپیل پر سماعت کی۔ سماعت کے دوران شوگر ملز کے وکیل مخدوم علی خان نے کمیشن تشکیل میں بے ضابطگیوں پردلائل دیے اور کہا کہ کسی بھی معاملے پر سمری کابینہ ڈویژن سے ہی بھیجی جاتی ہے۔ اس پر اٹارنی جنرل کا کہنا تھا کہ جس شعبے میں بحران پیدا ہوا اس سے متعلقہ وزارت انکوائری کی سمری بھیجتی ہے، ایسا تب ہوتا ہے جب تحقیقات کا فیصلہ متعلقہ وزارت نے کیا ہو لیکن اس بار چینی اسکینڈل کی تحقیقات کا فیصلہ وزیراعظم کا تھا۔اٹارنی جنرل نے مزید کہا کہ وزیراعظم تحقیقات کے احکامات جاری کرنے کا اختیار رکھتے ہیں، یہ اعتراض درست نہیں کہ پہلے کوئی سمری بھیجی جانا ہی ضروری تھی۔ عدالت نے مخدوم علی خان کو مزید قانونی نکات پر تحریری دلائل بدھ تک جمع کرانے کا حکم دیا اور فیصلہ محفوظ کرلیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں