وہ کون تھا ۔۔۔؟؟سی ایم ایچ پشاور میں کئی روز زیر علاج رہنے والا افغانی صحت یاب ، وطن واپس روانہ ، مگر یہ شخص دراصل کون تھا ؟ جان کر آپ پاک فوج زندہ باد کا نعرہ لگا دیں گے

وہ کون تھا ۔۔۔؟؟سی ایم ایچ پشاور میں کئی روز زیر علاج رہنے والا افغانی صحت یاب ، وطن واپس روانہ ، مگر یہ شخص دراصل کون تھا ؟ جان کر آپ پاک فوج زندہ باد کا نعرہ لگا دیں گے

راولپنڈی(ویب ڈیسک )خبروں کے مطابق افغان فوج کا ایک سپاہی پشاور کے سی ایم ایچ میں علاج کروانے کے بعد صحت یاب ہو کر وطن واپس روانہ ہو گیا ۔ تفصیلات کے مطابق افغان فوجی کا سی ایم ایچ پشاور میں علاج معالجہ ہوا اور وہ صحت یابی کے بعد طورخم بارڈر سے افغانستان

روانہ ہو گیا،افغان فوجی حکام نے پاک فوج سے علاج فراہم کرنے کی درخواست کی تھی۔آئی ایس پی آر سے جاری بیان کے مطابق افغان فوج کے ایک سپاہی کا سی ایم ایچ پشاور میں علاج معالجہ ہوا ہے۔ فوجی اہلکار کو مکمل طبی امداد فراہم کی گئی،جس کے بعد فوجی اہلکار صحتیاب ہو کر طورخم کے راستے افغانستان روانہ ہو گیا۔ یاد رہے کہ سی ایم ایچ میں پاک فوج کے جوانوں افسروں اور انکے اہل خانہ یا پھر اہم شخصیات کا علاج معالجہ ہوتا ہے اور کسی غیر ملکی شہری بالخصوص افغان فوجی کے علاج کا یہ شاید پہلا واقعہ ہے ۔ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق پاکستان نے بھارت کی جانب سے عید الاضحی کے موقع پر نمازعید پہ سخت پابندی عائد کرنے کے فیصلے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ بھارت کی غاصب افواج نے مقبوضہ کشمیر پر غیر قانونی قبضہ کررکھا ہے۔منگل کو دفتر خارجہ کی ترجمان عائشہ فاروقی نے کہا ہے کہ مقبوضہ کشمیر کے عوام کو نمازعید سے روکنا قابل مذمت اقدام ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ بھارتی قدامات بنیادی انسانی حقوق کے بھی صریحا منافی ہیں۔ترجمان دفتر خارجہ عائشہ فاروقی نے کہا کہ بھارت کورونا وبا کو مقبوضہ کشمیرکے عوام کی مذہبی آزادی چھیننے کے لیے استعمال کررہا ہے۔ دفتر خارجہ کی ترجمان نے اقوام متحدہ اورعالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ بھارت کے غیرآئینی اقدامات کا نوٹس لے۔ترجمان دفتر خارجہ عائشہ فاروقی نے واضح کیا کہ بھارت کے ظالمانہ ہتھکنڈوں سے کشمیریوں کی جدوجہد آزادی کو دبایا نہیں جا سکے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں