ظلم و جبر کا انجام : ایک شہزادے کو 2 سال سے قید رکھنا ولی عہد محمد بن سلمان کو مہنگا پڑ گیا ، بڑی کارروائی کی خبر

ظلم و جبر کا انجام : ایک شہزادے کو 2 سال سے قید رکھنا ولی عہد محمد بن سلمان کو مہنگا پڑ گیا ، بڑی کارروائی کی خبر

لندن (ویب ڈیسک) انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والی دو تنظیمیں سعودی حکمرانوں کی طرف سے شاہی خاندان کے ایک انسان دوست رکن، شہزادہ سلمان بن عبدالعزیز کے بلاوجہ قید میں رکھے جانے کے خلاف شکایت کرتے ہوئے اقوام متحدہ میں درخواست دیں گی۔سعودی عرب میں اس وقت 37 سالہ شہزادہ سلمان بن عبدالعزیز

کو ریاض حکومت نے جنوری 2018ء سے قید کر رکھا ہے۔ انہیں شاہی خاندان کے درجنوں ارکان کے خلاف شاہ سلمان اور ولی عہد محمد بن سلمان کی طرف سے کیے جانے والے کریک ڈاؤن کے دوران حراست میں لیا گیا تھا۔سلمان بن عبدالعزیز کے حامیوں کا کہنا ہے کہ سعودی شاہی خاندان کے ایک عام رکن کے طور پر موجودہ شاہ اور ولی عہد کو اس شہزادے سے کسی قسم کا کوئی خطرہ نہیں ہے۔پھر یہ بات ناقابل فہم ہے کہ شاہی حکمرانوں نے اس شہزادے کو گزشتہ ڈھائی سال سے بھی زیادہ عرصے سے قید میں کیوں رکھا ہوا ہے۔اسی لیے اب پرنس سلمان بن عبدالعزیز کے حامیوں نے ریاض حکومت پر بین الاقوامی دباؤ بڑھانے کے لیے اقوام متحدہ میں باقاعدہ تحریری شکایت کرنے کا ارادہ کیا ہے۔اس سلسلے میں انسانی حقوق کی دو تنظیموں نے عالمی ادارے کو بھیجنے کے لیے ایک دستاویز بھی تیار کر لی ہے، جو نیوز ایجنسی اے ایف پی کے نامہ نگار نے خود بھی دیکھی ہے۔یہ درخواست جنیوا سے انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والے گروپ مینا (MENA ) اور لندن میں قائم ہیومن رائٹس گروپ ALQST کی طرف سے جمع کرائی جا رہی ہے۔ اہم بات یہ بھی ہے کہ شہزادہ سلمان بن عبدالعزیز کے قید میں رکھے جانے کے خلاف اس تحریری شکایت سے قبل اسی مہینے ایک اور بڑا انکشاف بھی ہوا تھا۔یہ انکشاف امریکا میں دائر کیا جانے والا ایک مقدمہ تھا، جو سعودی عرب کے ایک سابق سینیئر انٹیلیجنس اہلکار سعد الجابری نے دائر کیا ہے اور جس میں الزام عائد کیا گیا ہے کہ سعودی ولی عہد محمد بن سلمان نے الجابری کو زندگی سے محروم کروانے کی کوشش کی تھی۔ماہرین کے مطابق اس طرح کے واقعات سے پتا چلتا ہے کہ تیل سے مالا مال اس قدامت پسند عرب بادشاہت میں شاہی خاندان کے حکمران طبقے کی طرف سے اپنے اقتدار اور لامحدود اختیارات کے تحفظ کے لیے کیا کچھ کیا جاتا ہے۔پرنس سلمان بن عبدالعزیز فرانسیسی دارالحکومت پیرس کی سوربون یونیورسٹی سے تعلیم یافتہ ہیں۔ ان کے قریبی ذرائع کے مطابق انہیں گرفتاری کے بعد پہلے تقریباﹰ ایک سال تک سعودی دارالحکومت ریاض کے قریب الحیر کی بہت زیادہ سکیورٹی والے قید خانے میں رکھا گیا تھا۔ اس کے بعد انہیں ریاض شہر میں ایک بنگلے میں منتقل کر دیا گیا تھا، جہاں ہر وقت سرکاری محافظوں کا پہرہ رہتا ہے۔اس سال مارچ میں سلمان بن عبدالعزیز کو اس بنگلے سے دو ماہ کے لیے کسی خفیہ مقام پر منتقل کر دیا گیا تھا۔ اس کی وجہ امریکا سے ان کی رہائی کے لیے چلائی جانے والی مہم اور یورپی ارکان پارلیمان کی طرف سے کیے جانے والے اس پرنس کی رہائی کے مطالبے بنے تھے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں