بریکنگ نیوز: سابق سنیٹر کو دن دہاڑے موت کے گھاٹ اُتار دیا گیا، حکام نے تصدیق کر دی

بریکنگ نیوز: سابق سنیٹر کو دن دہاڑے موت کے گھاٹ اُتار دیا گیا، حکام نے تصدیق کر دی

کابل (ویب ڈیسک) سابق سنیٹر محمد حسن ہوتک کا دن دہاڑے موت کے گھاٹ اتار دیا گیا۔ اطلاعات کے مطابق یہاں جنوبی زبول صوبہ ے ایک سابق سنیٹر محمد حسن ہوتک کا نا معلوم انتہا پسندوں نے گولی مار کر جان سے مار دیا ۔ مقامی حکام نے بھی اس واردات میں ہوتک کے

جاں بحق ہونے کی آج منگل کی شام تصدیق کر دی ہے۔ سرکاری ذرائع کے مطابق سوموار کی شام میں افغان دارالخلافہ کابل کے قلعہ وزیر علاقہ میں کئی نامعلوم مسلح افراد نے سابق قانون ساز پر اندھا دھند فائرنگ کی ۔ جس سے ان کی موقع پر ہی موت واقع ہوگئی۔ سلامتی دستوں نے مزید تفصیل نہیں بتائی لیکن کہا کہ اٹیک کرنے والوں کو کیفر کردار تک پہنچانے کے لیے تحقیقات جار ی ہیں۔ ابھی تک کسی گروپ یا فرد نے اس واردات کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔دریں اثناء قصر صدارت سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ افغان صدر اشرف غنی نے اس حملہ کی مذمت کی اور سلامتی عہدیداروں سے کسی کی تیزی سے تفتیش کرنے کہا ہے۔ سنیٹر ہوتک زبول صوبے کی بااثر اور ممتاز شخصیات میں سے ایک تھے۔ انہوں نے خود کو عوام کی فلاح و بہبود اور قیام امن کی کوششوں کے لیے وقف کر رکھا تھا۔ اس سے قبل بھی کئی ممبران پارلیمنٹ و سیاسی لیڈران طالبان کے ہاتھوں مارے جا چکے ہیں جن میں ازبیک ممبر پارلیمنٹ احمد خان سمنگانی،عبید اللہ بارک زئی اور ڈاکٹر اسد اللہ ہمت یار بھی شامل ہیں۔ ہمت یار اشرف غنی کے آبائی صوبہ لوگار سے ممبر پارلیمنٹ رہ چکے تھے۔جبکہ عبید اللہ بارک زئی اروزگان سے ممبر پارلیمنٹ تھے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں