ہم حکومت کو کالا قانون پاس نہیں کروانے دیں گے ۔۔۔!!! (ن)لیگ نے مخالفت کرتے ہوئے حکومت کے لیے ایک اور بڑی مشکل کھڑی کر دی

ہم حکومت کو کالا قانون پاس نہیں کروانے دیں گے ۔۔۔!!! (ن)لیگ نے مخالفت کرتے ہوئے حکومت کے لیے ایک اور بڑی مشکل کھڑی کر دی

اسلام آباد( ویب ڈیسک)پاکستان مسلم لیگ ن کے صدر میاں شہبازشریف نے کہا ہے کہ حکومت کالا قانون پاس کرانا چاہتی تھی، ہم نہیں چاہتے کسی کو بلاوجہ ہراساں کیا جائے اور تھانوں میں گھسیٹا جائے۔نجی ٹی وی کے مطابق اپوزیشن لیڈر شہبازشریف نے مشترکہ اجلاس کے بائیکاٹ کے بعد بلاول بھٹو زرداری کے ہمراہ پریس

کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں رولز کو پاؤں تلے روندا گیا سب نے دیکھا ،ہم نے ہمیشہ صبر و تحمل سے کام لیا لیکن آج تو سپیکر قومی اسمبلی نے ریڈلائن کراس کر دی اور مجھے فلور پر بات کرنے کی اجازت تک نہ دی گئی،سپیکر صاحب نے ہم سب کو بہت زیادہ مایوس کیا،میں سپیکر کے اس رویہ کے خلاف سخت احتجاج کروں گا ہم نے ایف اے ٹی ایف سےمتعلق اپنی ذمہ داری کونبھایا۔انہوں نے کہا کہ ہم نے حکومت کے ساتھ مل کر 12بل پاس کیے تھے لیکن حکومت کالا قانون پاس کرانا چاہتی تھی۔، ہماری ترامیم حقیقی تھی لیکن ہمیں بات تک نہ کرنے دی گی،یہ کہتے ہیں کہ اپوزیشن این آر او مانگتی ہے ان کو یہ نہیں پتا کہ اپوزیشن تو پہلے ہی نیب کو برداشت کررہی ہے۔اس موقع پر بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں غیر آئینی طریقے سے قانون سازی کی کوشش کی گئی،آج تک پی ٹی آئی سرکارجیسا غیر جمہوری رویہ نہیں دیکھا ۔ انہوں نے کہا کہ اپوزیشن لیڈر جب چاہے بات کرسکتا ہے لیکن ہمیں تو درکنار اپوزیشن لیڈرکو بھی فلور پر بات کرنے کی اجازت نہیں دی گئی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں