ان سے اچھے تو نواز اور شہباز تھے جو ۔۔۔۔ سانحہ موٹروے پر (ن) لیگی رہنما حنا پرویز بٹ کا حیران کن موقف سامنے آگیا

ان سے اچھے تو نواز اور شہباز تھے جو ۔۔۔۔ سانحہ موٹروے پر (ن) لیگی رہنما حنا پرویز بٹ کا حیران کن موقف سامنے آگیا

لاہور (ویب ڈٰسک) وہم و گمان میں بھی نہیں تھا، مانا کہ مجھ سے شدید غلطی سرزد ہوئی لیکن اتنا بڑا جرم تو نہیں تھا کہ اتنی قبیح سزا مسلط کی جاتی لیکن مجال ہے اِس عہد کے سلطان کے کان پر جوں بھی رینگی ہو، مجال ہے کہ کسی نے میرے سر پر آکر احساسِ تحفظ بھری

چادر ڈالی ہو،نامور (ن) لیگی خاتون سیاستدان حنا پرویز بٹ اپنے ایک کالم میں لکھتی ہیں ۔۔۔۔۔۔ مجال ہے کہ کسی باپ نے میرے آنسو پونچھے ہوں، مجال ہے عورتوں کے حقوق کے تحفظ پر بڑے بڑے لیکچر دینے والی حکومتی خواتین نے آگے بڑھ کر میری ہچکیوں کی شدت کو سمجھا ہو اور کسی نے میرے گھاؤ پر مرہم رکھا ہو۔ ان سے اچھے تو میاں نواز شریف اور میاں شہباز شریف تھے جو کسی بھی سانحے کے بعد فوری طور پر موقع پر پہنچتے اور نہ صرف غم میں شریک ہوتے بلکہ مجرموں کو قرار واقعی سزا دلوانے میں کلیدی کردار ادا کرتے۔ جنہیں یہ شو باز کہہ کر اپنی جھوٹی انا کو تسلی دیا کرتے تھے۔ میرے ہی نہیں بلکہ ہم سب کے تمام زعم چکنا چور ہو گئے، اب تو میرا پیغام صرف ایک ہی ہے، ان کیلئے جو ریاست کو ماں سمجھا کرتے ہیں، اٹھو سراب خواب سے باہر نکلو، آنکھیں پرنم ہیں، دل سسک رہا ہے، کوئی جائے فرار نظر نہیں آتی ہے، کانپتے لبوں پر ایک ہی بات ہے، اے میرے وطن کے باسیو، خدائے بزرگ و برتر نے ہم عورتوں کو تاڑنے، ظلم کرنے کیلئے نہیں بنایا، بلکہ اس نے انہیں تمہاری ناموس بنایا، اس کی قدر کرو۔ ہمیں ماں، بہن، بیٹی اور بیوی بنایا، میری درخواست ہے ہمیں جینے دو۔ موٹروے پر صرف ایک ماں، ایک بیٹی یا ایک بہن بےآبرو نہیں ہوئی بلکہ سب ذمہ داروں کی عزت کے پرزے اُڑے ہوئی لیکن افسوس اپنے غرور اور ہٹ دھرمی پر قائم ذمہ داران معمولی سے بھی نادم نہیں ہیں، یہ خوف بھی نہیں کہ روزِ حشر اپنے دامن پر لگے بےآبروئی کے داغوں کا کفارہ کیسے ادا کر پائیں گے؟ حقیقت تو یہ ہے کہ ذمہ داران کا غرور بے آبرو ہوا اور یہ نادم بھی نہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں