پی سی بی کی وسیم اکرم کو عہدہ لینے کی پیشکش ، سابق کپتان نے کیا جواب دیا ؟ کرکٹ شائقین کے کام کی خبر

پی سی بی کی وسیم اکرم کو عہدہ لینے کی پیشکش ، سابق کپتان نے کیا جواب دیا ؟ کرکٹ شائقین کے کام کی خبر

کراچی(ویب ڈیسک ) اقبال قاسم کے استعفیٰ کے بعد پاکستان کرکٹ بورڈ ابھی تک کرکٹ کمیٹی کا چیئرمین مقرر کرنے میں کامیاب نہیں ہوسکا ہے۔ تفصیلات کے مطابق پی سی بی نے گذشتہ دنوں کمیٹی کے رکن اور سابق ٹیسٹ کپتان وسیم اکرم کو سربراہ بنانے کی پیشکش کی تھی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ پی سی بی کے

چیف ایگزیکٹیو وسیم خان نے وسیم اکرم کو یہ پیشکش کی۔تاہم کمنٹری سمیت کئی اور اسائنمنٹ پر مصروف وسیم اکرم نے یہ عہدہ قبول کرنے سے معذرت کرلی۔ ان کا کہنا تھا کہ مجھ پر مفادات کے تصادم کا الزام لگادیا جائے گا اس لئے میں کسی کے الزامات کے بجائے آزادانہ کام کرنا چاہتا ہوں۔ وسیم اکرم ، محسن خان، وسیم خان اور اقبال قاسم کے ساتھ کرکٹ کمیٹی کے رکن کی حیثیت سے کام کرچکے ہیں۔ جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ جمہوری وزیراعظم ہوں کس کی جرات ہے کہ مجھ سے استعفیٰ مانگ،اگر مجھ سے ڈی جی آئی ایس آئی استعفیٰ مانگتا تومیں فارغ کردیتا، آرمی چیف نے مجھ سے پوچھ کر اپوزیشن سے ملاقات کی تھی۔وزیراعظم عمران خان نے سماء نیوز کو انٹرویودیتے ہوئے کہا کہ ماضی میں اگر کسی نے غلطی کی تو کیا ہم آرمی کو گالیاں دیتے رہیں،اب پاکستانی فوج بدل گئی،موجودہ حکومت اور پاک فوج کے درمیان تاریخی تعلقات ہیں، نوازشریف کو ہمیشہ افواج پاکستا ن کے ساتھ مسئلہ رہا کیونکہ آئی ایس آئی ان کی چوری پکڑ لیتی ہے۔نوازشریف جس فوج کو گالیاں دے رہے ہیں اسی کے سہارے یہ سیاست میں آئے تھے، ان لوگو ں نے عدالتوں پر حملے کیے ، عدلیہ کو بلیک میل کیا۔ایک سوال کے جواب میں وزیراعظم نے کہا کہ نوازشریف کہتے ہیں کہ مجھے آئی ایس آئی کے سربراہ نے کہا کہ استعفیٰ دو ، اگر مجھے کہتاتو میں اسی وقت فارغ کر دیتا۔ ادھر یہ کہتے ہیں کہ مشرف نے میرے کہنے کے بغیر حملہ کیا ، اگرمیر ے کہنے کے بغیر آرمی چیف ایسا کرتا تو اسی وقت فارغ کردیتا۔نوازشریف پاکستان کے ساتھ خطرناک کھیل کھیل رہا ہے، یہی کھیل الطاف حسین نے بھی کھیلا تھا۔بھارت ان کی مدد کررہاہے۔کیونکہ بھارت پاکستان میں فساد پھیلانا چاہتا ہے۔ اگر پاک فوج نہ ہوتی پاکستان کے تین ٹکڑے ہوچکے ہوتے۔وزیراعظم نے کہا کہ یہ لوگ مجھ پر دباﺅ ڈال کر این آراو لینا چاہتے ہیں ،میں اقتدار چھوڑ دوں گا لیکن ان کو این آرو نہیں دوں گا۔نوازشریف جھوٹ بول کر باہر گئے،ہمیں تو یہ بتایا گیا تھا کہ اگر علاج کے لیے باہر نہ بھیجا گیا تو یہ کسی بھی وقت مرسکتا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں