میں تو یہ کہتا ہوں کہ اب یہ سب ختم ہو جانا چاہیے ۔۔! میرے خود کے اثاثے منجمند ہیں جس کی وجہ سے ۔۔۔۔ رانا ثنا ءللہ ہمت ہار گئے ، حکومت سے کیا درخواست کر دی؟ جانیے

میں تو یہ کہتا ہوں کہ اب یہ سب ختم ہو جانا چاہیے ۔۔! میرے خود کے اثاثے منجمند ہیں جس کی وجہ سے ۔۔۔۔ رانا ثنا ءللہ ہمت ہار گئے ، حکومت سے کیا درخواست کر دی؟ جانیے

لاہور (ویب ڈیسک) سابق وزیر قانون پنجاب رانا ثناء اللہ کی طرف سے خصوصی عدالتیں ختم کرنے کا مطالبہ سامنے آگیا ۔ تفصیلات کے مطابق مسلم لیگ ن کے رہنما نے خصوصی عدالتیں ختم کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ میرے اوپر15 کلو ہیروئن کا جعلی کیس بنا ہوا ہے، جس کی وجہ سے میرے اکاؤنٹس بھی فریز ہیں ،

کیس پر 15 ماہ سے کچھ نہیں ہو رہا ، کیوں کہ خصوصی عدالتوں میں بیٹھے جج اپنے ضمیر کے قیدی ہیں ، ان ججز کی نگرانی ہوتی ہے، نوازشریف کو سزا دینے والا جج کہہ رہا ہے ضمیر کیخلاف فیصلہ دیا ، ملک میں کسی کے خلاف جھوٹا مقدمہ دائر نہیں ہونا چاہیے ، ایک طرف نیب انکوائری کررہا ہے ، مجھ پر الزام ہے میں نے اپنے اثاثے سمگلنگ سے بنائے ، اس کے ساتھ ساتھ میرے تمام اکاﺅنٹس بھی منجمد ہیں ، لیکن اس سب کے باوجود عمران نیازی ہم جھکنے والے نہیں ، بلکہ مقابلہ کریں گے اور تمہیں منطقی انجام تک پہنچائیں گے ، تم نے اپوزیشن کو کیا ایکسپوز کرنا ہے اب تم خود ایکسپوز ہونے کے قابل ہو ، کیوں کہ حکومت میں کرپٹ لوگ موجود ہیں، ہم ظلم کا مقا بلہ کررہے ہیں ، موجودہ پی ٹی آئی حکومت اربوں روپے کی دیہاڑی لگا رہی ہے، غریب افراد کو بے روزگار کیا جارہا ہے ۔انہوں نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان کو صرف اپوزیشن کی کرپشن نظرآتی ہے، اپنی نظر ہی نہیں آتی ، جہاں اربوں روپے کما کر ظفر مرزا بیرون ملک بیٹھے ہوئے ہیں ، جس کے لیے کورونا کی امداد میں ادویات اور ماسک کی خریداری 10 گنا کی قیمتوں پر کی گئی ، غریبوں کی جھونپڑیوں کو بلڈوز کیاجارہا ہے، لوٹ مار کا بازار گرم ہے، عوام کی زندگی اجیرن بن چکی ہے جبکہ موٹروے سانحے کا ملزم ابھی تک گرفتار نہیں ہوا ، یہ ظلم زیادہ دیر قائم نہیں رہ سکتا، کیوں کہ تہیہ کرلیا ہے کہ ظلم کیخلاف کھڑے ہوں گے۔مسلم لیگ ن کے رہنما رانا ثنا اللہ نے مطالبہ کرتے ہوئے کہ عمران خان استعفیٰ دیں اور آزادانہ انتخابات کرائے جائیں ، یہ ساری اپوزیشن کو نااہل کرانا چاہتے ہیں، اپوزیشن کا اداروں کیخلاف کوئی بیانیہ نہیں ، ہم ووٹ کی عزت کو پامال نہیں ہونے دیں گے ۔ بتایا گیا ہے کہ قبل ازیں انسدادنارکوٹکس عدالت میں مسلم لیگ ن کے رہنما رانا ثنا اللہ کے خلاف ہیروئن برآمدگی کیس کی سماعت ہوئی ، اس موقع پر رانا ثنا اللہ اپنے وکیل کے ہمراہ عدالت میں پیش ہوئے ، جج شاکر حسین کے رخصت پر ہونے کے باعث کارروائی نہ ہوسکی ، ڈیوٹی جج خالد بشیر نے کیس کی سماعت 31 اکتوبر تک ملتوی کردی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں