پنجاب میں مسلم لیگ (ن) کا ووٹ بنک برقرار۔۔۔ مگر چاروں صوبوں میں تحریک انصاف کے ووٹ بنک کا کیا حشر نشر ہو چکا ہے ؟ اس خبر میں جانیے

پنجاب میں مسلم لیگ (ن) کا ووٹ بنک برقرار۔۔۔ مگر چاروں صوبوں میں تحریک انصاف کے ووٹ بنک کا کیا حشر نشر ہو چکا ہے ؟ اس خبر میں جانیے

لاہور (ویب ڈیسک) آج ہر شخص پاکستان میں جب سے پی ٹی آئی کی حکومت آئی ہے ،خواہ وہ تاجر و صنعتکار ہو،ملازمت پیشہ ہو یاکسی بھی طبقہ سے تعلق رکھتا ہو بے چینی اور تذبذب کا شکار ہے،غیر محفوظ ہے،ہر کسی سے پوچھ رہا ہے،پا کستان کا مستقبل کیا ہے ؟

نامور کالم نگار خلیل احمد نینی تال والا اپنے ایک کالم میں لکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔غربت منہ پھاڑے ہر ایک کی طرف بڑھ رہی ہے ۔اس 2سالہ دور میں مہنگائی آسمان سے باتیں کر رہی ہے ۔ہر چیز پر مافیا قابض ہو چکی ،اب تو وزراء کے بھی کرپشن میں ملوث ہو نے کی خبریں آ رہی ہیں ۔دیگر جماعتوں کے افراد جو پی ٹی آئی کی چھتری کے تلے اپنے گناہ نیب سے دھلوا چکے ہیں ۔چینی ،آٹا ،پیٹرول مافیا بھی پی ٹی آئی کی وجہ سے اربوں کے گھپلے کر چکے ہیں ۔آج بڑے آرام سے دندناتے پھر رہے ہیں ،کچھ پاکستان سے باہر جا کر علاج کے بہانے وزیر اعظم کی پہنچ سے دور جا چکے ہیں ۔انصاف کا یہ حال ہے صرف حزب اختلاف کی حد تک ہے ،نیب ہر ایک پر ہاتھ ڈال چکا ہے۔مگر ایک ٹکہ بھی وصول نہیں کر سکا ،ایک طرف بارشوں نے معیشت اوردوسری طرف شہروں ،گائوں کی سڑکیں ،بازار ، منڈیاں اجاڑ کر رکھ دی ہیں ۔ہر صوبے کا بُرا حال ہے ،رہی سہی کسر کورونا وائرس نے گزشتہ چھ،سات ماہ سے پوری کر کے قوم کو ادھیڑ ڈالا ہے۔صنعتکارمسلسل مہنگی بجلی،گیس اور پیٹرول کی وجہ سے پریشان ہو کر اپنے اپنے کاروبار سمیٹ رہے ہیں ۔اسکول کے بچے تعلیم سے دور کر دئیے گئے ہیں ، کوروناکی آڑ میں حکومت اُن سے کھلواڑ کر رہی ہے،قدرت اگر پاکستان پر مہربان نہ ہوتی تو شاید بھارت سے بھی بُرا حشر ہمارا ہوتا ۔ اب حزب اختلاف نے بھی تنگ آکر کروٹ لے لی ہے۔دیکھتے ہیں کس کے اشاروں پر وہ اکٹھے ہو کر عمران خان سے

دو دوہاتھ کر نے کھڑے ہو ئے ہیں اور جلسہ جلوس کی آڑ میں کونسا کھیل کھیلنا چاہ رہے ہیں ۔وزیر اعظم بار بار کہہ رہے ہیں،وہ این آر او نہیں دینگے تبدیلی تنزلی میں تبدیل ہو رہی ہے ۔معیشت اور کتنی نیچے جائے گی ،کسی وزیر مشیر ،صدر اور خود وزیر اعظم کو نہیں معلوم۔ اسٹاک ایکسچینج پھر نیچے کی طرف اور سونا ،ڈالر اوپر کی طرف تیزی سے جا رہا ہے ۔آئی ایم ایف اور ورلڈبینک کے کارندے حکومتی عہدیدار بن کر قوم کا خون چوس رہے ہیں ۔کے الیکٹرک کا ظلم قوم الگ سہہ رہی ہے ، اب تو اس کاسابق سربراہ اُن کا مشیر لگ گیا ہے ،رہی سہی کسر اب وہ نکالے گا۔یوٹرن کا بھی یو ٹرن ہو چکا ہے۔ہر صبح ایک نئی کہانی سننے کو مل رہی ہے ،خود ان کے وزراء عملی طور پر نا اہل ثابت ہو چکے ہیں اور صرف نیب سے بچنے کے لئے پی ٹی آئی کا دامن تھامے ہوئے ہیں اور وزیر اعظم کی ہاں میں ہاں ملانے میں ہی اپنی عافیت سمجھتے ہیں اور وزیر اعظم کو Missguideبھی کرتے ہیں ۔ابھی کراچی کے جزائرکا معاملہ وفاق نے اُٹھایا سندھ حکومت جو 1100ارب کا پیکیج کھانے کی تیاری کر کے شور مچا رہی تھی،اس کو بھول گئی اور سمندری جزائر پر اپنی پوری قوت صرف کر رہی ہے۔اس معاملہ کی سنگینی کو اسٹیبلشمنٹ بھی خاموشی سے دیکھ رہی ہے ، کراچی سے صرف وسائل کی حد تک غرض ہے خواہ مرکز ہو یا صوبائی حکومت، کوئی کراچی سے مخلص نظر نہیں آتا۔مسلم لیگ (ن)نے پنجاب کو خوشحال بھی کراچی کے ٹیکسوں سے کیا ،اس لئے اس کا ووٹ بینک ابھی تک بر قرار ہے۔سندھ میں بھٹو کارڈ ابھی تک چل رہا ہے۔پاکستان کے مستقبل کی کسی کو فکر نہیں ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں