نواز شریف اشتہاری قرار ۔۔۔۔ مگر کیا اب انہیں پاکستان واپس لانا ممکن ہے ؟ نامور قانون دانوں کی آراء پر مشتمل بی بی سی کی خصوصی رپورٹ

نواز شریف اشتہاری قرار ۔۔۔۔ مگر کیا اب انہیں پاکستان واپس لانا ممکن ہے ؟ نامور قانون دانوں کی آراء پر مشتمل بی بی سی کی خصوصی رپورٹ

لاہور (ویب ڈیسک) اسلام آباد ہائی کورٹ کی جانب سے سابق وزیراعظم میاں نواز شریف کو اشتہاری مجرم قرار دینے کے بعد قانونی ماہرین کی اہم رائے سامنے آئی ہے کہ یہ فیصلہ سابق وزیراعظم کو وطن واپس لانے کے لیے مدد گار ثابت نہیں ہو سکتا۔آپ کو بتاتے چلیں کہ

وزیرِ اعظم عمران خان بارہا کہہ چکے ہیں کہ وہ نواز شریف کو وطن واپس لانے کی بھرپور کوشش کریں گے اور اس حوالے سے اپنے برطانوی ہم منصب سے ملاقات بھی کریں گے۔ماہر قانون ریما عمر کا کہنا ہے کہ برطانوی حکومت پاکستانی عدالتوں کے احکامات پر عمل درآمد کرنے کی پابند نہیں ہے اور خاص طور پر ایسے فیصلے جو فوجداری مقدمات میں سنائے گئے ہوں۔اُنھوں نے کہا کہ کسی شہری کو ملک بدر کرنے کا اختیار انتظامی ضرور ہے لیکن اس پر عمل درآمد کے لیے بھی پورا طریقہ کار اختیار کرنا پڑتا ہے۔اُنھوں نے کہا کہ کسی بھی شخص کو ملک بدر کرنے کے لیے یہ بہت ضروری ہے کہ اسے برطانوی عدالت نے کسی جرم میں سزا سنائی ہو۔ریما عمر کا کہنا تھا کہ برطانوی ویزا فارم میں یہ شق تو درج ہے کہ اگر درخواست گزار کو کسی مقدمے میں سزا سنائی گئی ہو تو وہ ویزا لینے کا اہل نہیں ہے لیکن اس ویزا میں ایسی کوئی شق موجود نہیں ہے کہ کوئی اشتہاری ویزا کی درخواست نہیں دے سکتا۔قومی احتساب بیوور کے سابق ڈپٹی پراسیکوٹر جنرل ذوالفقار بھٹہ کے مطابق اس فیصلے سے حکومت کو زیادہ سے زیادہ فائدہ یہ ہو سکتا ہے کہ وہ اس پر عمل درآمد کرتے ہوئے سابق وزیر اعظم کی پاکستان میں جائیدادوں کو قرقی کر لیں لیکن وہ میاں نواز شریف کو برطانیہ سے وطن واپس نہیں لا سکتے۔اُنھوں نے کہا کہ پاکستان اور برطانیہ کے درمیان مجرموں کے تبادلوں کا کوئی معاہدہ نہیں ہے جبکہ دوسرا اہم نکتہ یہ ہے کہ سابق وزیر اعظم

علاج کی غرض سے خود برطانیہ نہیں گئے بلکہ میڈیکل بورڈ کی سفارش پر اُنھیں علاج کی غرض سے برطانیہ بھیجا گیا ہے اور اگر انھیں واپس بھیجا گیا تو ان کی جان کو خطرہ بھی ہو سکتا ہے۔خیال رہے کہ پاکستان اور برطانیہ کے درمیان مجرموں کے تبادلے کے معاہدے کے حوالے سے متعدد مسودے تیار ہوئے ہیں لیکن ان میں سے کوئی بھی حتمی نتیجے تک نہیں پہنچ سکا۔ذوالفقار بھٹہ کا کہنا تھا کہ انٹرپوول سمیت دیگر اہم بین الاقوامی اداروں میں پاکستانی اداروں کی ساکھ پر سوال اٹھائے جاتے ہیں۔ واضح رہے کہ اس سے قبل انٹرپول سابق وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار، جنھیں ایک مقدمے میں اشتہاری قرار دیا گیا ہے، کو وطن واپس لانے سے متعلق حکومت پاکستان کی درخواست کو مسترد کر چکی ہے۔سابق ڈپٹی پراسکیوٹر جنرل کا کہنا تھا کہ ملک کے ایک حصے سے اشتہاری مجرم کو گرفتار کرکے دوسرے شہر میں لے کر جانے کے لیے بھی مقامی مجسٹریٹ سمری ٹرائل کرتا ہے اور پھر اس کے بعد کسی بھی اشتہاری مجرم کو پولیس کے حوالے کرنے کے بارے میں فیصلہ دیتا ہے۔حکمراں جماعت پاکستان تحریک انصاف کے لائرز فورم کے سربراہ اور سابق وفاقی وزیر بیرسٹر علی ظفر کا کہنا ہے کہ اسلام آباد ہائی کورٹ کی طرف سے سابق وزیر اعظم کو اشتہاری قرار دیے جانے کے فیصلے کے بعد حکومت پاکستان برطانوی حکومت کو میاں نواز شریف کو پاکستان کے حوالے کرنے کی صرف درخواست ہی کر سکتی ہے کیونکہ پاکستانی حکومت کے پاس سابق وزیر اعظم کو وطن واپس لانے کا کوئی قانونی اختیار نہیں ہے۔بی بی سی سے بات کرتے ہوئے اُنھوں نے کہا کہ ’اگر برطانوی حکومت پاکستانی حکومت کی درخواست کو وزن دیتے ہوئے اسے قبول کرلیتی ہے تو پھر میاں نواز شریف کو یہ قانونی حق حاصل ہے کہ وہ برطانوی حکومت کے اس فیصلے کے خلاف عدالت میں جاسکتے ہیں۔‘بیرسٹر علی ظفر کا کہنا تھا کہ اس عدالتی فیصلے کے بعد پاکستانی حکومت اگر میاں نواز شریف کی حوالگی کے بارے میں برطانوی حکومت کو درخواست دیتی ہے تو اس میں یہ موقف اختیار کر سکتی ہے کہ سابق وزیر اعظم ایک سزا یافتہ مجرم ہیں اور اس کے علاوہ ہائی کورٹ نے اشتہاری بھی قرار دیا ہے اس لیے ان کا ویزہ منسوخ کر کے انھیں وطن واپس بھیجا جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں